رمضان المبارک ۱۴۳۵ھ مطابق جولائی ۲۰۱۴ء

وفات جناب محمد احمد صاحب  رحمۃ اللہ علیہ

۴ شعبان ۱۴۳۵ھ مطابق ۳جون ۲۰۱۴ء بروز منگل دوپہر کو حلیم الامت حضرت اقدس مولانا شاہ حکیم محمد مظہر صاحب دامت برکاتہم کے پھوپھی زاد بھائی جناب محمد احمد صاحب  رحمۃ اللہ علیہ قضاء الٰہی سے اپنے خالق ِ حقیقی سے جاملے۔ مرحوم حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ   کی بڑی ہمشیرہ صاحبہ رحمۃ اللہ علیہا  کے چھوٹے صاحبزادے تھے اور حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ اِن کا خصوصی خیال رکھتے تھے مرحوم کو ماشاء اللہ حضرت والا کے بچپن کے حالات خوب یاد تھے جس سے حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ  کی حیاتِ مبارکہ کا وہ گوشہ جو عُموماً مشائخ کے حالات میں ملنا دشوار ہوتا ہے اُجاگر ہوا۔جامع مسجد اشرف، گلستان جوہر میں حضرت والا مولانا شاہ حکیم محمد مظہر صاحب دامت برکاتہم نے نماز جنازہ پڑھائی اور عشاء سے قبل اسی قبرستان میں تدفین ہوئی حہاں حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ آسودۂ خاک پاک ہیں۔حضرت والا مولانا شاہ حکیم محمد مظہر صاحب دامت برکاتہم اور حضرت کے صاحبزادگان تدفین میں شامل رہے۔ جناب محمد احمد صاحب  رحمۃ اللہ علیہ کے بڑے صاحبزادے جناب قاری عالم صاحب جامعہ اشرف المدارس میں حفظ کے قدیم استاذ ہیں، حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ سے جدائی کے غم اور صدمہ کا اظہار اپنے گھر والوں سے کرتے رہتے تھے کہ ماموں چلے گئے اب ہم جی کر کیا کریں گے۔ عجیب بات یہ ہے  کہ حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ   کی نماز جنازہ ۳؍ جون ۲۰۱۳؁ء کو صبح ہوئی اور جناب الحاج محمد احمد صاحب  رحمۃ اللہ علیہ کاانتقال بھی۳؍ جون ۲۰۱۴؁ء ہی کوہوا اورتدفین  بعد مغرب ہوئی۔ اللہ تعالیٰ مرحوم کی بے حساب مغفرت فرمائیں۔

حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ  کے خلیفہ مجاز جناب مولانا شفیق احمد صاحب بستوی  دامت برکاتہم کی ساس صاحبہ بھی گزشتہ دنوں وفات پاگئی ہیں، ادارہ ان کے غم میں بھی برابر کا شریک ہے، اور قارئین سے بھی دعائے مغفرت کا خواست گار ہے۔

شیخ الحدیث حضرت مولانا محمد زید صاحب کی جامعہ آمد

۱۰ شعبان مطابق ۹ جون بروز پیر حضرت والا رحمۃ اللہ علیہ  کے خلیفہ جناب مولانا نور محمد صاحب اپنے استاذ جناب مولانا محمد زید صاحب کو خانقاہ حضرت والا کی ملاقات کے لیے لے کر آئے، مولانا زید صاحب جامعہ اشرفیہ لاہور کے ۱۹۷۰ء کے فاضل ہیں اور حضرت والا مدظلہ کے جامعہ اشرفیہ کے ساتھیوں میں سے ہیں۔ جامعہ ربانیہ ٹوبہ ٹیک سنگھ قائم شدہ ۱۹۳۷ء میں کم و بیش۲۰ سال شیخ الحدیث رہے، اور اب جامعہ اسلامیہ محمدیہ فیصل آباد کے شیخ الحدیث ہیں۔ حکیم الاسلام حضرت مولانا قاری محمد طیب صاحب قاسمی رحمۃ اللہ علیہ (سابق مہتمم دار العلوم دیوبند) کے مجاز بیعت ہیں اور حضرت قاری صاحب رحمۃ اللہ علیہ  ہی کے حکم سے عارف باللہ حضرت ڈاکٹر محمد عبد الحی صاحب عارفی رحمۃ اللہ علیہ سے اصلاحی تعلق قائم رکھا۔ مولانا متعدد کتب کے مصنف بھی ہیں، جن میں ماشاء اللہ شانِ اعمال ، شانِ جامی اردو شرح ملا جامی رحمۃ اللہ علیہ ، شانِ زیدوی بحل میبذی شامل ہیں۔ان کا گھرانہ علماء اور حفاظ کا گھرانہ ہے۔ مولانا کے شاگردوں میں ہزاروں علماء و طلباء شامل ہیں جن میں جامعہ اسلامیہ امدادیہ فیصل آباد کے رئیس جناب مفتی محمد طیب صاحب اور نائب رئیس جناب مولانا محمد زاہد صاحب، جناب مولانا عبد الرزّاق صاحب اور مدینہ منورہ کے مولانا یونس بٹ صاحب قابل ذکر ہیں۔ حضرت والا مولانا کو اپنے ساتھ جامعہ لے گئے اور جامعہ کا تفصیلی دورہ کرایا۔

دارالعلوم محمدیہ کورنگی میں تقسیم ِ اسناد کی تقریب میں شرکت

۲شعبان ۱۴۳۵ھ مطابق یکم جون ۲۰۱۴ء بروز اتوار حلیم الامت  حضرت اقدس مولانا شاہ حکیم محمد مظہر صاحب دامت برکاتہم دارالعلوم محمدیہ کورنگی  کے جلسہ تقسیم اسنادمیں شرکت کے لیے تشریف لے گئے اورفارغین حفظِ قرآن ِ پاک و تجوید میں انعامات تقسیم فرمائے  ۔ صدر مدرسہ جناب مولانا افتخار صاحب مد ظلہم (استاذِ حدیث و التفسیر دارالعلوم کورنگی کراچی) نے حضرت کو مدرسہ کی طرف سے اعزازی شیلڈ پیش کی۔ آخر میں حضرت دامت برکاتہم نے شرکاء جلسہ کو اپنے  مختصر اور نہایت جامع  بیان سے مستفید فرمایا۔

متعلقہ مراسلہ

Last Updated On Sunday 17th of November 2019 06:17:03 AM